Like Our Facebook Page

New Poets Added

Poets Directory

Latest Poetry

Your Poetry

muharam nahe hai tu hai nawahai raz ka (Mirza Asadullah Baig)

Make This Poetry Your Favorite

محرم نہیں ہے تو ہی نوا ہائے راز کا یاں ورنہ جو حجاب ہے، پردہ ہے ساز کا رنگ شکستہ صبحِ بہارِ نظارہ ہے یہ وقت ہے شگفتنِ گل ہائے ناز کا تو اور سوئے غیر نظر ہائے تیز تیز میں اور دُکھ تری مِژہ ہائے دراز کا صرفہ ہے ضبطِ آہ میں میرا، وگرنہ میں طَعمہ ہوں ایک ہی نفسِ جاں گداز کا ہیں بسکہ جوشِ بادہ سے شیشے اچھل رہے ہر گوشہٴ بساط ہے سر شیشہ باز کا کاوش کا، دل کرے ہے تقاضا کہ ہے ہنوز ناخن پہ قرض اس گرہِ نیم باز کا تاراجِ کاوشِ غمِ ہجراں ہوا، اسد سینہ، کہ تھا دفینہ گہر ہائے راز کا

Comment Box is loading comments...

More Poetry Of Mirza Asadullah Baig